بنیادی صفحہ / انٹرٹینمنٹ / مختصر مگر جامع / جب اسامہ تبلیغی جماعت والو سے ملا

جب اسامہ تبلیغی جماعت والو سے ملا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تبلیغی جماعت والوں سے ایک درخواست

 


آج شام کِسی کام سے بازار گیا ، واپسی پر دیکھا تو تبلیغی جماعت کے کچھ ساتھی گشت کرتے ہوئے دین کی تبلیغ کررہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یوں تو دین کی تبلیغ الفاظ سے نہیں کردار سے کی جاتی ہے ، تبلیغ کے لیے لمبی چوڑی لفاظی کی ضرورت نہیں ہوتی ، تبلیغ کے لیے سامنے والے کے مزاج کے مطابق گفتگو کرنی پڑتی ہے ، لیکن ہمارے ہاں تبلیغ کے لیے ”امیر صاحب” کے ”رٹائے” ہوئے چند جملوں کو اچھی طرح حفظ کرکے ” حلق ” سے ادا کیا جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چناچہ چند مشہورِ زمانہ جملوں کے لیے جماعت کے ساتھیوں نے آگھیرا ۔۔۔۔۔۔ اور مجھے مسجد میں چل کر مشورہ اور دیگر مشاغل میں شریک ہونے کی دعوت دی ۔۔۔۔۔۔۔ میں نے دعوت قبول کی لیکن اِس سے کیا حاصل حصول ہوگا اُس بارے میں پوچھا ۔۔۔۔ سب جوانی کی حدود کو چھو چُکے تھے ، عمروں میں خاص فرق نہ تھا ۔۔۔ چناچہ بات تفصیل سے ہونے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے وہاں موجود تمام افراد کو اپنا نام وغیرہ بتا کر اُن سے اُن کا شہر پوچھا ، تو معلوم پڑا کہ وہ پاکستان کے دور دراز علاقے سے آئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔ پوچھنے پر معلوم پڑا کہ اُن میں سے دو پیشے کے اعتبار سے اُستاد ہیں ، ایک ڈاکٹر ہے اور کچھ طلباء ہیں ،،،،، میں نے اُن سے پوچھا کہ ” آپ یہاں کیوں آئے ہیں؟ بولے ظاہری سی بات ہے تبلیغ اور دین کے احکامات سیکھنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے پوچھا کیا آپ کو ایک طبیب کا مصطفوی کردار سکھایا گیا ہے؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا آپ کو ایک طالبعلم کیسا ہونا چاہیے بتایا گیا ہے؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا آپ کو معلمِ اعظم ﷺ کے وہ اطوار سکھائے گئے جو آپ نے اپنے علم کی ترویج کے دوران اپنائے ؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب کا جواب نہ میں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کا مطلب ہوا بے پناہ مشقتیں اُٹھا کر آپ کو یہاں صرف نمازیں پڑھانے اور تلاوت ، ذکر و اذکار کے لیے لایا گیا ہے؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ اِتنی مشقت کرکے یہاں آئے ہیں ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آپ اِتنی مشقت کرکے خالص اللہ کے دین کے لیے یہاں آئے ہیں ، شاید ہی آپ کا رُتبہ یہاں کسی ”ولی اللہ” سے کم ہوگا ، لیکن آپ ولی تب تک ہیں جب تک آپ مسجدمیں ہیں ، آپ کا چلہ ، سہ روزہ ، سالانہ ختم ، آپ کی ولایت بھی ختم اور آپ معمول کی زندگی پر آجائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہی بہتر نہ ہو کہ آپ کو اسلام کے عبادات کے ساتھ معاملات اور ہر پیشے کے لحاظ سے اُس کے اسلامی احکامات سکھائے جائیں ، تاکہ آپ کی تبلیغ کا اثر مسجد سے نکل کر گھر ، دفتر ، سڑک ، گاڑی ، راستے ، منزل ، اور ہر اُس جگہ تک پہنچ جائے جہاں آپ جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ”۔۔۔۔۔
اِس ساری گفتگو کے بعد اُنھوں نے میرے خیال کو پسند کیا اور اُسے امیر صاحب کے سامنے رکھنے کی یقین دہانی کروا کر چل دئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شاید ہی میری درخواست پر امیر صاحب نے غور بھی کیا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن تبلیغی دوستوں کے سامنے میرے منہ سے نکلنے والے چند الفاظ کوئی وقتی غبار نہیں تھا بلکہ یہ میرے 5 سال سے زائد کے مشاہدے کا نتیجہ دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے تبلیغ میں وقت لگائے بہت سے ایسے لوگوں کو دیکھا جن کی تبلیغ اُن کی داڑھی بڑی اور پانچے چھوٹے سے کرسکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں ایک ایسے تبلیغی کو بھی جانتا ہوں جس کی پندرہ راتیں سہ روزوں اور پندرہ جنگل سے(غیر قانونی) درخت کاٹتے گزرتی ہیں
۔۔۔۔ ایک سال سے زائد عرصہ لگانے والے ایسے سرکاری افسر کو بھی جانتا ہوں جو کہتا ہے فائل کے ساتھ پر لگاؤ (نوٹ لگاؤ) تاکہ وہ اُڑ کر اُوپر پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے مبلغ کو بھی جانتا ہوں جس کا بہت وقت تبلیغ میں گزرا لیکن اُس کی بیکری کے کارخانے میں میدہ کم چوہے زیادہ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے امیر صاحب کو بھی جانتا ہوں جو عورتوں کی خرید و فروخت میں ملوث ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہی بہتر نہ ہوتا اگر تبلیغ والے داڑھی اور شلوار کی طرح معاملات پر بھی بھرپور توجہ دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ تبلیغ کا اثر مسجد سے نکل کر سرکاری دفتر ، سرکاری جنگل اور بیکری تک چلا جاتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاید تبلیغ کے بڑوں سے بڑی بھول ہوئی ہے کہ ایک شخص تبلیغ کی نیت سے بستہ باندھنے کو تو بہت جلدی تیار ہوجاتا ہے ،،،، لیکن اپنے گھر ، اپنے محلے اور نوکری کی جگہ پر اسلام اور تبلیغ کے احکامات کو لاگو نہیں کرتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ درحقیقت مولانا طارق جمیل کے علاوہ کسی صاحب نے کبھی اِس رُخ پر بات ہی نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تبلیغی جماعت پاکستان کی وہ واحد جماعت ہے جس میں بیک وقت مرد عورت ، خواجہ سرا، ن لیگی ، پی ٹی آئی ، پی پی پی وغیرہ ، دیوبندی ، بریلوی وغیرہ، اُستاد ، طالبعلم ، ڈاکٹر ، انجینئر وغیرہ موجود ہے، اگر تبیلغی جماعت عبادات کی طرح معاملات میں بھی بھرپور توجہ دے تو اِس جماعت سے ”تبلیغی ” نہیں بلکہ ”کامل مسلمان” نکلیں گے ، اور ویسے بھی بقول ”امیر صاحب ” ” کامیابی اللہ کے سارے کے سارے دین پر عمل کرنے میں ہے ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

اسام بن نسیم کیانی

سول انجئنیرنگ میں ایم ایس کے طالبعلم اور بے باک لکھاری

 

Like , Share , Tweet & Follow

تعارف: admin