بنیادی صفحہ / انٹرٹینمنٹ / چین کا برفانی لڑکا (دردناک حقیقت)

چین کا برفانی لڑکا (دردناک حقیقت)

یہ سوموار کا دن اور 9 جنوری 2018 کی ایک سرد صبح ہے۔ جنوب مغربی چائنہ کے صوبہ یونان میں برف باری اپنے عروج پر ہے ۔لڈیان کائونٹی میں صبح کے وقت درجہ حرارت تیس منٹ کے اندر اندر منفی 9 ڈگری سینٹی گریڈ تک گر گیا ۔ (پانی 0 ڈگر ی پر برف بن جاتا ہے ) اتنی شدید ٹھنڈ میں کورے کی دبیز تہ نے رہی سہی ہر چیز کو بھی اپنی آغوش میں لے لیا۔ دور ، گارے اور گھاس کی بنی ایک جھونپڑی میں شمعیں اگر چہ گل ہیں لیکن کچھ ہلچل جاری ہے ۔ 8 سالہ وانگ فومان جو اپنی بہن اور دادی کے ساتھ رہائش پذیر ہے سکول جانے کی تیاری میں مگن ہے ۔ وانگ چائنہ کے ان 60 ملین بچوں میں شامل ہے جن کے والدین غربت اور پسماندگی کی وجہ سے اپنے ساتھ نہیں رکھ سکتے ۔ ایسے بچے یا تو کسی بورڈنگ سکول میں داخل ہوتے ہیں یا دور گائوں میں اپنے کسی بوڑھے رشتہ دار کے پاس۔ جبکہ ان کے والدین شہر میں محنت مزدوری کرنے چلے جاتے ۔ وانگ کی والدہ اس کی پیدائش کے فوراً بعد ہی اسے چھوڑکر چلی گئی ۔ والد صاحب دور ایک شہر میں کرتے ہیں اور چار مہینے بعد صرف کچھ دن کے لئے چھٹی ملتی ہے ۔ اس دوران وانگ اپنی بہن اور دادی کے ساتھ اس جھونپڑی نما گھر میں رہائش پذیر ہے جس کی دیواروں سے بھی پانی رستا ہے ۔


آج سالانہ امتحان کا پہلا دن ہے ۔ آنکھ کھلی حسب معمول ناشتہ کرنے کے لئے گھر میں کوئی چیز نہیں ہے ۔ وانگ نے اپنا بستہ اٹھایا ۔ ایک پرانی ، بوسیدہ ہلکی سی جیکٹ پہنی ۔ دروازہ کھولتے ہی یخ بستہ ہوا نے استقبا ل کیا ، بدن میں جھر جھری طاری ہو گئی ، سر کے بال کھڑے ہو گئے لیکن سکول جانا ضروری تھا ۔ اور سکول وانگ کے گھر سے 5 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ وانگ نے یہ سارا راستہ ان یخ بستہ برفانی ہوائوں میں پیدل طے کیا۔ اور 2 گھنٹے پیدل چلنے کے بعد وہ سکول پہنچ گیا ۔ لیکن اس کے سر کے بال اس عرصے میں ٹھنڈ سے جم کر سفید ہو چکے ہیں ۔ گال انتہائی سرخ اور ہاتھ سوج چکے ہیں ۔ ایک دو جگہ سے ہاتھ پھٹ کر ان میں سے خون رس رہا ہے ۔ وانگ کی یہ حالت دیکھ کر اس کے سارے کلاس فیلو ہنسے لگتے ہیں ۔ ایک استاد نے یہ منظر کیمرے کی آنکھ میں قید کر لیا ۔ اسی حالت میں وانگ نے امتحان دیا اور اس پرچے میں 100 میں سے 99 نمبر حاصل کئے ۔ وانگ کے استاد نے سوجھے ہوئے ہاتھوں اور اس کے پرچے کی ایک تصویر لی اور پرنسپل کو دکھا دی ۔ زرا سی دیر میں یہ تصویر پرنسپل سے ہوتی ہوئی پورے چائنہ میں پھیل چکی تھی ۔ سوشل میڈیا پر ان پیچھے رہ جانے والے بچوں کی حالت زار کے بارے میں ایک بحث شروع ہو چکی تھی ۔ میڈیا کی یلغار ، لوگ اس بچے کا انٹرویو کرنے کے لے بھاگے چلے آ رہے اس کی تصویریں اس کے گھر کی تصویریں اور بچے کے انٹرویوز ہوا کے دوش پر پھیلنے لگے ۔ والد کو جب یہ صور تحال پتہ لگی تو وہ گھر پہنچا ۔ اس نے اپنے بیٹے کو 5 چائنیز یوان جیب خرچ کے طور پر دیئے ۔ بچے نے وہ رقم یہ کہ کر انتہائی احتیاط سے سنبھال لی کہ جب اس کے والدین میں سے کوئی بیمار ہو گا تو یہ رقم اس کے علاج کے لئے کام آئے گی ۔


یہ کہانی کا صرف ایک پہلو ہے ۔ مگر ایک دوسرا پہلو بھی ہے ۔ دیکھئے کتنے جان شکن اور دردناک حالات کے با وجود ایک 8 سالہ بچہ ہمت نہیں ہار رہا ۔ اس کے سامنے بھیک مانگنے سے لے کر اور بھی کئی راستے ہوں گے ۔ چاہے تو گھر میں ہی ٹھہر جائے ۔ مگر وہ محنت کو اپنا شعار بنا لیتا ہے ۔ حالات کے جبر کا سامنا کرتا ہے اور پھر جب اس سے ایک صھافی یہ پوچھتا ہے کہ تم اتنی تکلیفیں برداشت کر کے تعلیم کیوں حاصل کر رہے ہو تو بچہ جواب دیتا ہے کہ مجھے امید ہے ایک دن یہ تعلیم میری زندگی بدل دے گی ۔ اور نہ صرف میری بلکہ میں اپنے خاندان کی اس بدحالی کو بھی خوشحالی میں بدل سکوں گا۔ یہ عزم پہاڑوں کے سینے توڑ دیتا ہے کامیابی تو ایک چھوٹی سی بات ہے ۔
کہانی کا تیسرا پہلو بھی ہے ۔ وانگ ایک لمبے عرصے سے وہاں رہائش پذیر ہے اور اسی سکول میں آتا جاتا ہے ۔ اس سے پہلے بھی نہ جانے ایسے کتنے دن گزرے ہوں گے یا اس سے بھی سخت ۔ کسی نے مگر نوٹس نہیں لیا ۔ بہر حال ایک المیہ ہوا اور وہ نظر میں آگیا اب اس کا سکول اور وہ خود عطیات اور تحفوں کے سیلاب کی زد میں ہے ۔ اس جیسے پتہ نہیں کتنے بچے اور ہوں گے ۔ میرے اور آپ کے ارد گرد جو اپنی ساری بچگانہ خواہشیں دبا کر ، نہ جانے کتنی تکلیفیں سہ کر کتنے ہی مشکل حالات میں خاموشی سے زندگی گزارنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ کیا ہم ان کی مدد کرنے کے لئے کسی المیے کے وقع پذیر ہونے کا انتظار کر رہے ہیں ؟ لازمی ہے کہ اس کسمپرسی میں ماں مر جائے تو ہم بچے کی پرورش کا زمہ لیں گے ؟ اپنے ارد گرد نطر دوڑائیے ۔ اللہ نے آپ کو نوازا ہے تو اسے بچوں کے دست و بازو بنئے ۔ اگر نہیں تو ان کی معلومات آگے بیان کر دیجئے ہو سکتا ہے کوئی اور اس انتظار میں ہو؟

تحریر :

کامران امین

چین میں نینو ٹیکنالوجی کے پی ایچ ڈی سکالر ہیں

Like , Share , Tweet & Follow

تعارف: admin

x

Check Also

معروف رومانوی شاعرہ یسری وصال کا ایک خوبصورت انداز

معروف رومانوی شاعرہ یسری وصال کا نیشنل بک کے سالانہ دسویں فیسٹیول ...