بنیادی صفحہ / انٹرٹینمنٹ / شعری مجموعہ” وصال یار” کی شاعرہ یسری وصال کیلئے ایوارڈ کا اجراء

شعری مجموعہ” وصال یار” کی شاعرہ یسری وصال کیلئے ایوارڈ کا اجراء


اسلام آباد(اے پی ایس)نیشنل پریس کلب کے زیراہتمام صحافت کے مختلف شعبہ میں اعلی کارکردگی کی بنیاد پر ایوارڈ برائے اعلی کارکردگی کی تقریب کا انعقاد کیا گیا،جس میں ایک سو اسی کے لگ بھگ ایوارڈ تقسیم کئے گئے، اس موقع پر خبررساں ایسوسی ایٹڈ پریس سروس اور روزنامہ ایف آئی آر سے منسلک تین اعلی سٹارز کو بھی ایوارڈ دیے گئے جن میں سید اطہر رضوی،سلطان بشیر اور بشری وصال کے نام نمایاں رہے جبکہ نوجوان رومانوی شاعری یسری وصال کی رواں سال کی بہترین شعری مجوعے وصال یار کو بہترین شاعری کی کتاب 2018 کا اعزاز دیا گیا

اس موقع پروزیر اعلی گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے نیشنل پریس کلب اسلام آباد کی سالانہ ایوارڑ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ میڈیا پر پابندی کا کھبی بھی فائدہ نہیں ہوا البتہ اس پر پاپندی کے نقصانات بہت ہیں اس لئے ضرورت اس امر کی ہے کہ صحافت کی ترقی اور میڈیا کی آزادی کو یقینی بنائیں،نقائص کمی کوتاہیاں ہر شعبے اور ہر ادارے میں ہو سکتی ہیں لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ پورے شعبے کا گلا گھونٹا جائے انہوں نے کہا کہ جب صحافت

آزاد نہیں ہوگی تو اس سے ریاست بھی اور سیاست بھی متاثر ہوتی ہے اگر صحافت آزاد ہو ہر صحافی اپنے آپ کو صحافی کے ساتھ ساتھ ریاست کے ایک ذمہ دار شہری کی زمہ داریوں کا ادراک کر کے آگے بڑھے گا تو اس سے معاشرہ ترقی کرے گاوزیر اعلی نے مزید کہا کہ میڈیا کے بغیر سیاسی نظام بے معنی ہو کر رہ جاتا ہے انہی معاشروں میں سیاسی نظام مضبوط ہو سکتا ہے جہاں صحافت نظام پر نظر رکھے اور حکومت و دیگر ادروں کی کمی کوتاہیوں کی نشان دہی کرے ،اس لئے ضرورت اس امر کی ہے کہ صحافی برادری اپنی ذمہ داریوں کو احسن طریقے سے نبھائے ،ملک میں جمہوریت کی ترقی کے لئے صحافی برادری کا کردار ناقابل فراموش ہے ،وزیر اعلی نے مزید کہا کہ میں بذات خود گلگت بلتستان کے کئی مسائل ،اداروں کی کمزوریوں اور نقائص سے میڈیا کے زرئعے ہی آگاہی حاصل کرتا ہوں جیسے گزشتہ دنوں سرکاری خزانے سے آفیسران کے لئے مہنگے موبائل سیٹ خرید کر دینے کی خبر تھی اس حوالے معلومات لیں تو معلوم ہوا کہ ہماری حکومت نے کہ اس قسم کی کوئی مراعات نہیں دیں ہیں اور نہ ہی اس مد میں کوئی فنڈ رکھا گیا ہے سابقہ کسی حکومت نے یہ احکامات دئے تھے اسی کی روشنی میں موبائل سیٹ خریدنے کا فیصلہ ہوا تھا مجھے معلوم ہوا تو اس پر ایکشن لے کر فیصلہ منسوخ کیا ،اسی طرح گلگت بلتستان کے دور دراز علاقوں کے مسائل سوشل اور پرنٹ میڈیا کی وساطت سے مجھ تک پہنچتے ہیں تو میں حتی المقدور حل کرنے کی سعی کرتا ہوں کہنے کا مقصد یہ ہے کہ میڈیا کی اہمیت مسلمہ ہے اس کے بغیر کوئی معاشرہ ترقی کی جانب بڑہ ہی نہیں سکتا ہے۔انہوں نے اس موقعہ پر نیشنل پریس کلب ،راولپنڈی اسلام آباد ،پی ایف یو جے اور یونئن آف جرنلسٹ کے عہدیداران کو دعوت دی کہ وہ موسم بہار میں گلگت بلتستان آئیں اور دنیا کے سامنے گلگت بلتستان کا مثبت امیج اجاگر کریں

Like , Share , Tweet & Follow

تعارف: admin

x

Check Also

نسٹ یونیورسٹی کی ہونہار طلبہ قراۃ العین افتخارکا اعزاز

اسلام آباد: ایسوسی ایٹڈ پریس سروس نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ...